کشمیر پر اقوام متحدہ اور دنیا کو منافقانہ رویے ترک کرنا ہونگے :رانا بشارت علی خاں

.
میں نے نہ صرف اس مسئلے پر آواز اٹھائی بلکہ دنیا بھر میں کشمیری بھائیوں کی جدوجہد حق خود ارادیت کو اجاگر کیا ہے تاکہ انہیں معلوم ہوسکے کہ مسئلہ کشمیرکیا ہے۔

رانا بشارت علی نے 10 دسمبر کو مقبوضہ کشمیر کے ساتھ منسلک کر دیا ہے . لہٰذا اب انسانی حقوق کا عالمی دن کشمیری بھائیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کریں ، بھارتی مظالم کے خلاف آواز اٹھانے اور دنیا کے سامنے بھارت کا سفاک چہرہ بے نقاب کرنے کے لیے منایا جائے گا۔

بھارت جو اپنے ملک میں رہنے والے دیگر مذاہب کے لوگوں کے لیے زندگی تنگ کر رہا ہے۔

کشمیر 72 برسوں سے نہ صرف دو ممالک کے مابین فساد کا باعث ہے ، بلکہ کروڑوں لوگوں کے بنیادی حقوق کی پامالی کا سب سے بڑا واقعہ ہے

انسانی حقوق کی عالمگیر اہمیت کو سمجھتے ہوئے ،
10 دسمبر کو اقوام متحدہ کے عالمی یوم انسانی حقوق کے موقع پر انسانی حقوق کی بین الاقوامی تحریک نے مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی ریاستی دہشت گردی وسیع پیمانے پر انسانی حقوق کی پامالیوں کو اجاگر کرنے کے لیے یوم انسانی حقوق کشمیر منانے کا اعلان کیا ہے۔ آن لائن زوم پر سیمینا رز اور تقریبات منعقد کی جائیں گی یورپ کے مختلف ممالک میں یہ دن منایا جائے گااور دنیا کو بتایا جائے گا بھارت انسانیت کا قتل کر رہا ہے۔بھارت نےعالمی انسانی حقوق کی تنظیموں پر مکمل پابندیا عائد کر رکھی ہیں اورکشمیریوں پر ڈھائے جانے مظالم کو دنیا سے چھپایا جارہا ہے۔ انسانی حقوق کی بین الاقوامی تحریک کے چیرمین رانا بشارت علی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےکہا کہ اقوام متحدہ کے کمیشن برائے انسانی حقوق نے مقبوضہ کشمیر کے حالات بھارتی مظالم پر دو رپورٹیں شائع کی ہیں اس کے باوجود بھارت کے خلاف کوئی موثر کاروائی نہیں ہوئی کہ وہ قتل عام بند کرے بھارت پر عالمی دبائو نہ ہونے وجہ سے بھارتی حکمران ظلم کی داستانیں رقم کر رہے ہیں ۔ اقوام متحدہ اپنی رپورٹوں پر عمل درآمد نہیں کرا سکا جس کے نتیجے میں بھارتی حکمرانوں کی حوصلہ افزائی ہورہی ہے کشمیری مسلسل بھارتی فوج کی درندگی کا شکار ہیں حالات انتہائی سنگین صورت حال اختیار کر چکے ہیں۔ رانا بشارت علی نے کہا کہ بھارت ایک طرف مقبوضہ کشمیر میں ظلم اور جبر کی داستانیں رقم کر رہا ۔ جبکہ کنٹرول لائن پر مسلسل جارحیت کی وجہ سے حالات کشیدہ ہوتے جارئے ہیں ۔ پاکستان کو جنگ کی دھمکیاں دی جارہی ہیں ۔ حکومت پاکستان نے بھارت کی دہشت گردی اور جارحیت کے تمام ثبوت دنیا کے سامنے پیش کر دیئے ہیں ۔ اس کا اگر نوٹس نہ لیا گیا تو نتائج کی ذمہ داری پاکستان پر نہیں ہوگی ۔انہوں نے کہا کہ بھارت پاکستان کو جنگ کے لیے مجبور کر رہا ہے ۔ اور دو ایٹمی قوتوں کے درمیان فوجی تصادم کے نتائج انتہائی خطرناک ہوں گے اور اس کا ذ مہ دارانڈیا اور عالمی امن کے علمبردار ہوں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *